ٹیکنالوجی

سپریم کورٹ کی طرف سے پاکستان میں یوٹیوب پر پابندی عائد کرنے کا اشارہ کیا

عدالت کو اظہار رائے کی آزادی سے کوئی مسئلہ نہیں ہے۔

اسلام آباد (گلف انسائڈ اردو) سپریم کورٹ نے فرقہ وارانہ تشدد کے کیس کی سماعت کرتے ہوئے سوشل میڈیا اور یوٹیوب پر قابل اعتراض مواد کا نوٹس لیا اور پاکستان میں یوٹیوب پر پابندی کا اشارہ دیا ہے۔

بدھ کے روز جسٹس مشیر عالم کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے فرقہ وارانہ تشدد کے ایک کیس میں ملزم شوکت علی کی ضمانت کی درخواست کی سماعت کی۔

سماعت کے دوران ، درخواست گزار کے وکیل کے دلائل کے دوران ، جب سوشل میڈیا پر فرقہ وارانہ تشدد کو مبینہ طور پر فروغ دینے کا ذکر کیا گیا تو ، بینچ میں موجود جسٹس قاضی امین نے ریمارکس دیئے کہ عدالت کی کارکردگی اور لوگوں کو بولنے کا حق ہے۔ فیصلوں پر اور وہ تہذیب کے دائرے میں رہتے ہوئے ان فیصلوں پر تنقید کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ججوں کو بھی عوام کے ٹیکسوں سے ہی تنخوا ملتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ عدالت کو اظہار رائے کی آزادی سے کوئی مسئلہ نہیں ہے۔

جسٹس قاضی امین نے ریمارکس دیئے کہ اب یہ ایک نئی روایت ہے کہ نہ صرف عدالتی فیصلوں پر سوشل میڈیا پر بلاجواز تنقید کی جاتی ہے بلکہ یوٹیوب اور سوشل میڈیا پر ججوں کے اہل خانہ کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یو ٹیوب پر کوئی چاچا  تو کوئی ماما بن کر بیٹھ جاتے ہیں اور عدالتی فیصلوں کی آڑ میں جج صاحبان کو شرمندہ کیا جاتا ہے۔

جسٹس قاضی امین نے ریمارکس دیئے کہ لوگ سوشل میڈیا پر فوج ، عدلیہ اور حکومت کے خلاف نفرت پھیلا رہے ہیں۔
جسٹس قاضی امین نے ریمارکس دیئے کہ عدالت تحمل کا مظاہرہ کررہی ہے لیکن آخر میں اسے ختم ہونا پڑا۔

بینچ کی صدارت کرنے والے جسٹس مشیر عالم نے ریمارکس دیئے کہ کیا فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) اور پاکستان ٹیلی کمیونیکشن اتھارٹی (پی ٹی اے) نے یوٹیوب پر جو کچھ ہو رہا ہے اسے دیکھا ہے۔

انہوں نے پی ٹی اے حکام سے پوچھا کہ کیا یوٹیوب اور سوشل میڈیا کو ریگولیٹ کرنے کے لئے کوئی عملی اقدام اٹھایا گیا ہے؟

پی ٹی اے اہلکار نے عدالت کو بتایا کہ ان کی ایجنسی ایسے کسی بھی مواد کی نشاندہی کرسکتی ہے لیکن اس پر عمل کرنے کا اختیار نہیں ہے۔

بینچ کے سربراہ نے ریمارکس دیئے کہ بہت سے ممالک میں یوٹیوب پر پابندی لاگو ہے اور بہت سارے ممالک میں سوشل میڈیا کو مقامی قوانین کے تحت کنٹرول کیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ امریکا اور یوروپی یونین کے خلاف مواد یوٹیوب پر شائع کیا جائے اور پھر دیکھیں کہ کیا کارروائی کی جاتی ہے۔

اس سلسلے میں سپریم کورٹ نے وزارت خارجہ اور اٹارنی جنرل کو نوٹسز جاری کردیئے ہیں۔

یہ خبر آنے کے بعد ہی YouTubeban# پاکستان میں ٹرینڈ کررہا ہے۔

 

 

مزید دیکھیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button